ملتان( آن لائن ) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ہمارا سب سے بڑا چیلنج مہنگائی کو قابو کرنا ہے، جہانگیر ترین کو کوئی تشویش ہے تو وزیراعظم سے ملاقات کریں ، ہمار اکوئی ممبر کسی دوسری پارٹی میں نہیں جا رہا، ممبران قومی و صوبائی اسمبلی عمران خان کے فیصلے کے پابند ہیں، ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہہمارا سب سے بڑا چیلنج مہنگائی کو قابو کرنا ہے جبکہ حکومت نے رمضان بازاروں کو سہولت بازار کی شکل دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ میں عوام کے لیے سہولیات فراہم کریں گے اور 29 مارچ کو اختیارات سلب کرنے والا نوٹیفکیشن واپس لے لیا گیا ہے۔ روپیہ اب مستحکم ہونا شروع ہو گیا ہے اور روپے کی بہتری سے امپورٹڈ اشیا کی قیمتوں پر فرق پڑے گا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان سے گزشتہ روز لاہور میں جنوبی پنجاب کے اراکین اسمبلی نے ملاقات کی ہے۔ وزیراعظم جلد ملتان اور بہاولپور میں سیکرٹریٹ کا بنیاد رکھیں گے اور

سیکرٹریٹ کے لیے 70 کروڑ روپے ریلیز ہو گئے ہیں اور وزیر اعظم نے فی الفور فنڈز کے اجراکی ہدایت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں مافیاز کا مقابلہ کرنا پڑ رہا ہے اوروزیراعظم مہنگائی پر ہر ہفتے بریفنگ لیتے ہیں۔وزیراعظم نے رمضان پیکج کے لیے اربوں روپے کی گرانٹ منظور کی ہے۔ ممبران قومی و صوبائی اسمبلی عمران خان کےفیصلے کے پابند ہیں، آزاد ممبران نے بیان حلفی جمع کروایااوراسمبلی میں تحریک انصاف کے بینچ پربیٹھناشروع کیا۔ایک سوال کے جواب میں شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ 17 شوگر ملز کو نوٹس ملے، ان میں سے صرف ایک مل جہانگیر ترین کی ہے، اگر جہانگیر ترین کو کوئی تشویش ہے تو وہ وزیراعظم سے ملاقات کریں، عمران خان خندہ پیشانی سے جہانگیرترین کی ہر بات سنیں گے۔وزیر خارجہ کا کہنا تھا ہمار اکوئی ممبر کسی دوسری پارٹی میں نہیں جا رہا، میرا پیپلز پارٹی سے اختلاف ہوا تو میں نے اپنی سیٹ چھوڑی اور استعفیٰ دیا۔

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں