گزشتہ روز مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما رانا ثنااللہ اور احسن اقبال نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان کو کھلے الفاظ میں دھمکیاں دیں۔سابق وزیر قانون پنجاب بولے کے اگر تحریک انصاف کی حکومت میں نواز شریف کی جاتی امرا رہائشگاہ کو گرانے کی کوشش کی گئی تو اس کے بعد ان کی جماعت کے دوبارہ اقتدار میں آنے پر وہ زمان پارک والے وزیراعظم کے گھر کو منہدم کر دیں گے۔رانا ثنا اللہ نے لاہور میں مسلم لیگ ن کے جنرل سیکرٹری اور رہنما احسن اقبال کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کے دوران چیف سیکرٹری پنجاب اور دیگر بیوروکریسی کے افسران کو بھی دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ جو لوگ تحریک انصاف کی حکومت کے کہنے پر یہ سب کر رہے ہیں ان میں چیف سیکرٹری یا جو بھی شامل ہیں وہ یہ جان لیں کہ وہ بھی یہیں رہیں اور ان کے بچے بھی یہیں ہوں گے۔سابق صوبائی وزیر قانون رانا ثنااللہ نے کہا کہ بیوروکریسی کے جو افسران محض ترقی پانے کے لیے یہ سب کر رہے ہیں وہ یہ جان لیں کہ اپنے آقاؤں کے اس طرح سے حکم بجا لاکر وہ اپنی حد عبور کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کل کو کسی نے یہ کہا کہ وہ حکومتی پریشر کے باعث مجبور تھا تو اس کا یہ عذر قابل قبول نہیں ہو گا۔مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر سینئر صحافی و تجزیہ کار معید پیرزادہ نے اپنی ایک ٹویٹ میں انکشاف کیا کہ ” میں نے سنا ہے مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما رانا ثنا االلہ نے سول سرونٹس اور ان کے اہلخانہ کو براہ راست دھمکانا شرو ع کردیا ہے”۔انہوں نے مزید لکھا کہ “رانا ثنا اللہ نے سول سرونٹس اور ان کے اہلخانہ کو دھمکاتے ہوئے کہا ہے کہ عمران خان کی حکومت کے خاتمے کے بعد ان تمام افسران اور ان کے اہلخانہ کو بخشا نہیں جائےگا.معید پیرزادہ نے مزید لکھا کہ”اس سے قبل ایسا ہی اقدام احسن اقبال کی جانب سے بھی سامنے آیا تھا، یہ بہت ہی افسوسناک واقعہ ہے، اس کی امید نہیں تھی۔مشہور ماہر معیشت ڈاکٹر منصور کلاسرا نے بھی ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ رانا ثنا اللہ نے چیف سیکرٹری پنجاب کو سرعام دھمکیاں دی ہیں کہ انہیں اور انکے خاندان کو نہیں چھوڑا جائے گا۔

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں