اسلام آباد ( آن لائن)وفاقی حکومت نے سابق وزیر اعظم عمران خان کے احکامات پر اختیارات کے ناجائز استعمال میں ملوث سرکاری افسران کو ان کے عہدوں سے ہٹانے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے ،یہ سرکاری افسران عمران خان کی ہدایت پر اپوزیشن جماعتوں کے سیاستدانوں اور اس وقت کی حکومت کے مخالف صحافیوں اور میڈیا ہائوسز کے خلاف کارروائیاںکرنے میں ملوث ہیں،ذرائع کے مطابق ڈی جی ایف آئی اے ثناء اللہ عباسی کو ہٹانے کے بعد ڈائریکٹر ایف آئی اے سندھ زون عامر فاروق کو بھی فارغ کر دیا گیا ہے اور انہیں ہیڈ آفس میں ڈائریکٹر لاء تعینات کیا گیا ہے،اسلام آباد کے ڈپٹی کمشنر حمزہ شفقات پہلے ہی تبدیل ہو چکے ہیں جبکہ چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیو ڈاکٹر اشفاق کو بھی ہٹانے کا اصولی فیصلہ کرلیا گیا ہے ۔

حکومتی ذرائع کے مطابق ڈاکٹر اشفاق نے سپریم کورٹ سینئر جج جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف عمران خان کے احکامات پر نہ صرف اختیارات کا ناجائز استعمال کیا بلکہ ایف بی آر کے افسران کو استعمال کرتے ہوئے جسٹس قاضی فائز عیسی کے خلاف بیرون ممالک سے شواہد اور دستاویزات جمع کرنے کے نام پر قومی خزانے سے لاکھوں پائونڈ بھی خرچ کر دیئے گئے مگر حاصل کچھ نہ ہوا۔

ذرائع کے مطابق ایف بی آر کے مطابق کمشنر اور اسسٹنٹ کمشنرز کو بھی ہٹانے کا فیصلہ کیا جا چکا ہے جو کہ مختلف میڈیا ہائوسز اور عمران خان مخالف صحافیوں کو بے بنیاد ٹیکس نوٹسز بھجوا کر ہراساں کررہے تھے۔

ڈاکٹر اشفاق کی ہدایت پر صحافیوں کو نوٹسز بھجوانے کا ٹاسک اسسٹنٹ کمشنرساجد علی کو دیا گیا تھا انہیں بھی ہٹانے کا فیصلہ کیا گیا ہے جبکہ وزیر اعظم وزارت خزانہ سے نئے چیئرمین ایف بی آر کے لئے نام بھی مانگ لئے ہیں ،دوسری طرف چیئرمین سی ڈی اے اور چیف کمشنر عامر احمد علی کو ہٹایا جارہا ہے اور ان کی جگہ بھی نئی تعیناتی کے لئے وزیر اعظم نے افسران کا پینل مانگ لیا ہے ۔

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں