خیبر پختونخوا میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ بہت بڑھ گئی ہے .18-18 گھنٹوں تک لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے.

اس گرمی میں اس طرح کی لوڈ شیڈنگ ناقابل برداشت ہے۔ غلط پروپیگنڈا کیا جارہا ہے کہ خیبر پختونخوا کے عوام بل نہیں دیتے۔ خیبر پختونخوا کا دوسرے صوبوں سے موازنہ کیا جائے تو یہاں بل دینے کی شرح زیادہ ہے۔ ہم بھی چاہتے ہیں کہ بجلی چوری ختم ہو اس کے خلاف حکومت کو مکمل کریک ڈاؤن کرنا چاہئے۔ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ آپ لوگوں کو بجلی کی نعمت سے محروم رکھیں۔
میں مطالبہ کرتا ہوں کہ ناجائز لوڈ شیڈنگ کو فلفور ختم کیا جائے۔ بجلی لوڈ شیڈنگ پر اسمبلی میں بھی بات کروں گا۔ حکام بالا اور خاص کر چیف پیسکو سے کہتا ہوں کہ ایک گھنٹہ بعد لوڈ شیڈنگ کرنے کا شیڈول بلکل قبول نہیں ہے۔ بجلی چوری پر ایکشن لیں پوری قوم آپ کے ساتھ کھڑی ہو گی.ناجائز لوڈ شیڈنگ اور اور بلنگ کسی صورت بھی قابل قبول نہیں ہے.اگر ناجائز لوڈ شیڈنگ ختم نہیں ہوئی تو عوام کو سڑکوں پر نکالوں گا۔ آزاد کشمیر کا کیا حال ہے ہم نہیں چاہتے ملک میں انارکی پھیلے ۔ آپ لوڈ شیڈنگ کو کنٹرول کریں اور لوگوں کو ریلیف دیں۔ اگر ہمارا مطالبہ پورا نہیں ہوا تو آگے کا لائحہ عمل دیں گے

اسد قیصر

شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں